KING'S IT WORLD
please register to watch content in detail
THANKS
ADMIN KINGSIT WORLD

KING'S IT WORLD


 
HomeHome  CalendarCalendar  GalleryGallery  FAQFAQ  SearchSearch  UsergroupsUsergroups  RegisterRegister  Log inLog in  
Search
 
 

Display results as :
 
Rechercher Advanced Search
kings it world text ad
KINGSITWORLD CALENDAR
Follow me on G+
KINGSITWORLD WEATHER
Latest topics
» QURAN MAJEED KE TAFSEER
Mon Aug 20, 2012 2:59 am by YOUSUFHALI

» PHY301 CIRCUIT THEORY REFERENCE BOOK
Wed Jul 25, 2012 11:36 am by shabbir1915

» MTH202 ASSIGNMENT NO 3 SOLUVED
Mon Jun 11, 2012 9:51 am by jaffarhussain

» Retrieve the DTC In the Jewel Module of 1995 Ford
Thu May 31, 2012 11:51 am by obd2tool

» How you can Obvious the Check Engine Light on the
Thu May 31, 2012 11:43 am by obd2tool

» send free sms and send free sms update on facebook
Tue May 15, 2012 8:33 pm by rizwan269

» United Bank Limited (UBL) - Fee Deposit
Thu May 10, 2012 3:33 pm by irumnaz

» PHOTO MIXER SOFTWARE
Fri Apr 20, 2012 10:02 am by sacredwkb

» Entrepreneurship Survey
Thu Mar 08, 2012 2:20 pm by Admin

» Fall 2011 Semester Result Announced
Thu Mar 08, 2012 2:19 pm by Admin

Navigation
 Portal
 Index
 Memberlist
 Profile
 FAQ
 Search
kings it world text ad
Social bookmarking
Social bookmarking Digg  Social bookmarking Delicious  Social bookmarking Reddit  Social bookmarking Stumbleupon  Social bookmarking Slashdot  Social bookmarking Yahoo  Social bookmarking Google  Social bookmarking Blinklist  Social bookmarking Blogmarks  Social bookmarking Technorati  

Bookmark and share the address of KING'S IT WORLD on your social bookmarking website
visitors counter
Powered by website analytics technology.
Keywords
kings it world text ad
FLAG COUNTER
free counters
LIVE TRAFFIC

Share | 
 

 JO MERI CHAHAT HE

View previous topic View next topic Go down 
AuthorMessage
Admin
Admin
avatar

Scorpio
Posts : 638
Points : 2155
Reputation : 19
Join date : 2010-05-15
Age : 29
Location : islamabad

PostSubject: JO MERI CHAHAT HE   Sun May 16, 2010 9:16 pm

بسم اللہ الرحمن الرحیم
اے ابنِ آدم!!
ایک تیری چاہت ہے.... اور ایک میری چاہت ہے
مگر ہوگا وہی.... جو میری چاہت ہے!!
اگر تو نے خود کو سپرد کردیا اُس کے.... جو میری چاہت ہے
تو میں بخش دوں گا تجھ کو.... جو تیری چاہت ہے!!
اور اگر تونے نافرمانی کی اُس کی.... جو میری چاہت ہے
تو میں تھکا دوں گا تجھ کو اُس میں.... جو تیری چاہت ہے
اور پھر ہوگا وہی.... جو میری چاہت ہے!!

ایسا ہی ہوتا ہے.... حرف بہ حرف، لفظ بہ لفظ.... ایسے ہی ہوتا ہے!! اِک چاہت ہماری ہے جو چاہیں کریں، ہم چاہیں تو فرعون بنیں، ہم چاہیں تو موسیٰ.... ہم چاہیں ابراہیم بنیں ہم چاہیں نمرود.... ہماری چاہت ہے جیسا ہم چاہیں!! ایک چاہت ہماری ہوتی ہے خالصتاً ہماری چاہت، جس طرح ریوڑ میں سے کوئی بھیڑ بکری نکل کر ادھر اُدھر بھاگنے کی کوشش کرتی ہے اسی طرح انسان بھی کچھ خواہشات کچھ چاہتیں رکھتا ہے، وہ چاہتا ہے ایسا ہو، یوں ہو!! انسان کی خواہشات اُس کے اپنے تابع ہوتی ہیں، وہ جو چاہے!! تو پھر رب کی چاہت کیا ہے؟
حدیث قدسی سے جو بات میں سمجھ سکا ہوں اُس میں یہ بات تو بالکل واضح ہے کہ دو الگ الگ چاہتیں ہیں، ایک ہماری اور ایک ہمارے رب کی۔ ہماری چاہتیں ہمارے زیر اثر ہیں ہمارا رب نہیں چاہتا کہ ہم ایسا چاہیں!! اللہ تعالیٰ کسی پر ذرہ برابر بھی ظلم نہیں کرتا، عدل کا تقاضہ یہ ہوتا ہے کہ جو جیسا کرے ویسا بھرے!! سو ہمارے اعمال کا جب بدلہ دیا جائےگا تو دراصل وہ ہماری چاہتوں کا ہی صلہ ہوگا.... اچھا یا برا!! جیسا ہم چاہیں گے ویسا ہم پائیں گے۔ اسی طرح ایک چاہت رب کی ہے اور اُس میں ہمارا عمل دخل نہیں!!
مثال کے طور پر ہم چاہتے ہیں ہمارا پیٹ بھر جائے۔ اب سامنے دو راستے ہیں ایک وہ جو ہم چاہیں اور ایک وہ جو رب چاہتا ہے۔ ہم یہ چاہیں کہ کسی سے پیسے چھین کر اپنے پیٹ کی آگ ٹھنڈی کریں یا پھر ہم خود کو رب کی چاہت کے سپرد کرکے حلال ذرائع آمدن سے اپنا پیٹ بھریں۔ شکم پروری حلال سے بھی ہو جاتی ہے اور حرام سے بھی!! ایک اور چیز بھی ہوتی ہے کہ ٹھیک ہے دنیا گندم بوتی ہے، فصل کاٹتی ہے اور اُسے پیس کر روٹی بنا کر اپنا پیٹ بھرتی ہے لیکن ہم یہ چاہیں کہ اللہ تعالیٰ ہمیں اس سے بے نیاز کرکے ہمارا پیٹ ایسے ہی بھردے!! مشکل تو نہیں پروردگار کیلئے؟ وہ چاہے تو کرسکتا ہے.... مگر ”وہ“ چاہے تو!! ہم عام سے انسان ہیں، ممکن ہے ہمارا رب یہ چاہتا ہو کہ ہم اس سسٹم کے تحت چلیں!! میں یہ نہیں کہہ رہا کہ اللہ تعالیٰ ایسا نہیں کرسکتا نعوذ باللہ۔ میں تو بس یہ کہہ رہا ہوں کہ ایک ”میری“ چاہت ہے جس میں وہ دخل نہیں دیتا تو پھر جب ایک ”اُس کی“ چاہت ہے تو میں دخل دینے والا کون؟؟ جس طرح وہ زبردستی میری چاہت پر حاوی نہیں ہوتا کہ یہ چاہ اور یہ نہ چاہ!! اُسی طرح میں یہ کیسے کہہ سکتا ہوں کہ میں یہ چاہتا ہوں کہ تو یوں چاہے!!
یقین اور ضد میں بڑا باریک سا فرق ہوتا ہے.... اگر اس فرق کو اور دنیا کے مزاج کو دیکھ کر الفاظ سے کھلواڑ کروں تو کچھ ایسا ہے کہ ”پس منظر پر ضد ”یقین کامل“ ہے اور منظر پر یقین کامل ”ضد“ ہے!!“ منظر نظر کے سامنے ہے ہر صاحب بصارت دیکھ سکتا ہے اور پس منظر فقط صاحب بصیرت دیکھ سکتا ہے۔ حضرت ابراہیم علیہ السلام کے یقین کامل کے حوالے سے ایک واقعہ بیان کیا جاتا ہے جس میں نمرود اُنہیں آگ میں پھینکنے کا حکم دیتا ہے۔ نمرود کو ”یقین“ تھا کہ یہ آگ ابراہیمؑ کو جلا ڈالے گی، اور حضرت ابراہیم کو ”ضد“ تھی کہ اس آگ میں جلانے کی تاثیر رکھنے والا کوئی اور ہے!! یہ یقین اور ضد میں نے دنیاوی حساب سے کہا ہے، اس پورے واقعے میں میں نے کہیں نہیں پڑھا کہ حضرت ابراہیم علیہ السلام یہ ”چاہتے“ تھے کہ آگ گلزار بنے!! اللہ تعالیٰ نے آگ میں یہ تاثیر رکھی ہے کہ جو اُس کی لپیٹ میں آئے جل جائے، نمرود کو فقط آگ پر یقین تھا اور ابراہیم کو آگ میں تاثیر رکھنے والے پر یقین تھا!! حضرت ابراہیم علیہ السلام کا یقین یہ نہیں تھا کہ یہ آگ کے شعلے پھولوں کی طرح مہکیں گے، حضرت ابراہیم کی چاہت یہ نہیں تھی.... آگ پر نہیں آگ میں تاثیر رکھنے والے پر ایمان تھا!! آگ حضرت ابراہیم کی چاہت پر گلزار نہیں بنی.... اُس کی چاہت پر بنی جسے ابراہیم نے چاہا!!
میں آپ کو سچ سچ بتاتا ہوں کہ میں نے اپنے بچپن میں کئی بار بھڑکتی آگ پر ہاتھ رکھا!! اس یقین کےساتھ کہ میں اللہ تعالیٰ کا ماننے والا ہوں اسلئے مجھ پر آگ اثر نہیں کرےگی۔ شائد میں معجزات.... بلکہ یہ تو بہت بڑا لفظ ہوگیا، کسی ”جادو“ وغیرہ کے چکر میں تھا، میں چاہتا تھا کہ میں مسلمان ہوں تو یقینا اللہ تعالیٰ کا خاص بندہ ہوں، میری وجہ سے انہونی ہوسکتی ہے!! اب اتنا عرصہ گزر جانے کے بعد میں سوچتا ہوں.... یہ تو ”میری“ چاہت تھی۔ میں چاہتا تھا کہ اللہ تعالیٰ میرے لئے آگ کو گلزار کردے!!
یقین آگ پر نہیں آگ میں تاثیر رکھنے والے پر رکھو!! اُسے آزماﺅ نہیں، یہ نہ چاہوں کہ جو تم چاہتے ہو وہ بھی ویسا چاہے.... خود کو سپرد کردو اُس کی چاہت کے!! وہ چاہے تو آگ کو گلزار کردے یا وہ چاہے تو جسم جلا کر راکھ کردے، جو”وہ“ چاہے....!! آج میرے پاس اپنی بات کہنے کےلئے الفاظ نہیں ہیں، فقط احساس ہے ممکن ہے میں اپنی بات زیادہ واضح نہ کرسکا ہوں، میرے پاس الفاظ نہیں ہیں جس سے میں وہ بات بیان کرسکوں جو میں کہنا چاہتا ہوں۔ اوپر حدیث قدسی شیئر کی تھی، جسے پڑھ کر بس ایک مسکراہٹ اور خیال ذہن میں آگیا تھا وہ بھی شیئر کرتا چلوں....

”میرے مالک!! جب خود کو تیری چاہتوں کے سپرد کردیں تو ہمارے پاس فقط
ایک چاہت کے سوا بچتا ہی کیا ہے کہ ”جو تو چاہے....!!“
Back to top Go down
View user profile
 
JO MERI CHAHAT HE
View previous topic View next topic Back to top 
Page 1 of 1

Permissions in this forum:You cannot reply to topics in this forum
KING'S IT WORLD :: START WITH THE NAME OF ALLAH :: ISLAMIC INFO ZONE-
Jump to: